محمود سروش صاحب! ہم آج تک بڑے نہ ہوسکے

0
174

ندیم صدیقی

محمودسروش عالم شخص تھے۔مگر اپنے علم سے بے نیازی بھی ان کی ایک صفت تھی۔اُنہوں نے اپنے بھائیوں سبط ِحسن رضو ی،یعقوب حسنرضوی وغیرہ کیلئے فلمیں بھی لکھیں اور نیشنل بک ٹرسٹ کیلئے کتابوں کے ترجمے بھی کیے۔بمبئی کے مشہور روزنامہ انقلابؔ کیلئے  وقائع نگاری کی ذمے داری بھی   وہ نبھاچکے تھے ۔ اُن کا ذاتی کتب خانہ شہر بھر میں مشہور تھاجس میںعلمی وادبی کتب کا ایک بیش بہا خزانہ تھا جو،  اب رضوی کالج (باندرہ)میں منتقل  ہو چکا ہے۔


سروش  مرحوم  کے ذوق ِمطالعے کے بارے میں ایک واقعہ یہ بھی یہاں درج ہوجائے کہ مصحفی پر  وہ ، کچھ کام کر رہے تھے۔ مصحفی کی ایک کتاب کی انھیں تلاش تھی جو عام  اطلاع کے مطابق شہر میں کسی کے پاس نہیں تھی۔ پتہ چلا کہ فلاں صاحب کے پاس وہ کتاب ہے مگر وہ صاحب  اپنی کتاب کسی کو نہیں  دیتے۔ محمود حسن سروش نے کہا :’’ارے  بہت ہوگا وہ صریح انکار کر دیں گے ۔ میں ا ن کے پاس جاؤں گا  ضرور اور عرض بھی کروں گا ، اگر اللہ اور میرے مولا نے چاہا تو ہو سکتا ہے کہ میرے ساتھ وہ نہ ہو جو وہ دوسروں کے ساتھ رویہ روا رکھتے ہیں۔ لازم نہیں کہ سب کو ملے ایک سا جواب۔‘‘


مختصر یہ کہ محمود سروش  ان کے پاس گئے  اور اُن کے ذخیرۂ کتب کو دیکھ کر موصوف کے ذوق ِ علم کی تعریف کی، شخصِ مذکور نے بھی کچھ  سوال وجواب کئے  تو اُس پر محمود سروش کا بھی ذوق ِعلم عیاں ہوا اور اب اس نے کہا:   عزیزم !   میںآپ کی مطلوبہ کتاب دے سکتا ہوں مگر ایک شرط کے ساتھ۔ محمود سروش نے شرط پوچھی۔ جواب ملا کہ صبح کتاب دوں گا اور شام کو وہ کتاب آپ مجھے  واپس کریں گے۔ محمود سروش نے  یہ شرط مان کر ان کا شکریہ ادا کیا اور کوئی ایک عشرے تک یہ سلسلہ چلتا رہا کہ  وہ صبح اُس شخص کے گھر جاتے اور کتاب لاتے اور شام کو  وہی کتاب واپس کرنے جاتے اور پھر دوسری صبح وہی عمل اور پھر شام کو کتاب کی واپسی۔۔۔ یہاں اس کی وضاحت ضروری ہے کہ وہ شخص بمبئی کے   ڈونگری علاقے میں رہتا   تھا اور محمود سروش باندرہ میں۔ یہ بھی واضح ہوجائے کہ باندرہ سے ڈونگری کا علاقہ کوئی پندرہ کلو میٹر تو ہوگا ہی۔
ہم نے محمودسروش کی ذاتی لائبریری کا ذکر کیا ہے گھر کی  دیواروں میں فرش سے لے کر چھت تک کتابیں ہی کتابیں تھیں ایک بار ہم گئے ہم نے اپنی  ایک غزل سنائی اور  یہ کہا کہ’’ اس غزل کے بارے میں زیب غوری کا کہنا ہے کہ اس  کے مصرعے مختلف الوزن ہیں۔ سروش صاحب! آپ بتائیں کہ کیا  زیب ؔصاحب کا کہنا صحیح ہے؟۔۔۔‘‘اُنہوں نے پوری غزل سُنی اور پھر کہا :وہ تپائی لیجیے اور اُس طرف کھڑے ہوجائیے ،ہم تپائی پر کھڑے ہوگئے  ۔


اب کہنے لگے کہ اوپر سے تیسری صف میں دیکھو دائیں سے دسویں کتاب ہوگی۔ نکالو۔۔۔  ہم نے کتاب نکالی تو اُنہوں نے کتاب کا نام پوچھا۔ راقم نے کتاب کا نام پڑھ کر سنایا توکہنے لگے  ا س کتاب کا 36واں صفحہ کھولو۔ وہ صفحہ کھولا ،تو کہا گیا اب آٹھویں  سطرسے پڑھنا شروع کرو۔
مختصر یہ کہ پوری تقطیع تھی اُن سطروں میں۔ اس سے اندازہ اُن کی کتب بینی کا لگائیے اور مطالعے کے ہاضمے کا  اتہ پتہ بھی پائیے ۔
پڑھتے تو ہم بھی ہیں اور انہی کی نقل میں ہم نے بھی کتابیں جمع کر رکھی ہیں مگر وہ مطالعہ جس کا  ذکر ابھی ہو ا  وہ ہم میں مفقود ہے۔ اُردو، فارسی اور انگریزی کا یہ مثالی  عالِم جو  عروض  اور  زبان دانی میں اپنی مثال آپ تھا ، جس کے زمانے میں مہاراشٹراُردو اکادیمی بھی قائم ہوچکی تھی مگر   اسے نہ توکبھی اکادیمی مذکور کی رُکنیت کی پیش کش ہوئی اور نہ ہی کوئی اکادیمی ایوارڈ دِیا گیا۔   یہاں قابلِ ذکر بات یہ ہے کہ ہم نے اسے کبھی کسی ایوارڈ  وغیرہ کا طالب بھی نہیں پایا  اور اس سے بڑی بات یہ تھی کہ علمی یا  دانشوری کے زَعم  سے   دور بہت   دور تھا وہ۔  اسے اس کا قطعاً احساس نہیں تھا کہ لوگ اسے دانشور یا شاعر اعظم سمجھیں ایک  بار کسی تذکرے میں اُس کا ذکر نہیں تھا شاگرد جز بز ہوئے تو اْس نے فوراً سے پیشتر سب کو ڈانٹ دیا کہ۔۔۔ ’’ لوگ سمجھیں گے کہ مَیں ہنگامہ کر وارہا ہوں  اگر مجھ سے محبت کرتے ہوتو اس معاملے میں خاموش رہو۔ ورنہ میرے طوطے سمجھے جاؤ گے۔ کیا تم نہیں جانتے کہ علم ایک نور ہے اور ظلمت، نور سے تعلق رکھنے والے کو کبھی اپنے حصار میں نہیں  لے سکتی۔ علم  اپنے آپ میں خود ایک اعزاز ہے، ایک ایوارڈ ہے۔ یہ جو ایوارڈز کی خبریںآرہی ہیں یہ خبر یںہی ہیں  ، یاد رکھو خبر  باسی بھی ہوجاتی ہے مگر علم کبھی باسی نہیں ہوتا اور عزت علم ہی سے ملتی ہے۔‘‘ 


محمود سروش کے  درج ذیل اشعار جو اُردو دُنیا میںزباں زدِخاص وعام ہیں یہ اور بات کہ اکثر لوگوں کو، ان اشعار کے خالق کا نام نہیں پتہ:
اب مجھ سے کاروبار کی حالت نہ پوچھئے
آئینہ بیچتا ہوں مَیںاندھوں کے شہر میں
زمیں کا دِل بھی یقیناً کسی نے توڑا ہے
بلا سبب تو یہ چشمے اُبل نہیں سکتے
ویران کس قدر ہے یہ بازار اے سروشؔ!
شاید یہاں متاعِ ہنر بیچتے ہیں لوگ
اور یہ نعتیہ رُباعی بھی اِنہی محمود سروش کی فکر کا نتیجہ  ہے:
اوروں کا شرف اُنؐ سے ملایا نہ ملا
اغیار میں ایسا کوئی آیا نہ ملا
دُنیا نے بہت ڈھونڈا محمدؐ کا جواب
ثانی تو بڑی چیز ہے سایہ نہ ملا
سروش مرحوم کے ایک شاگردِ عزیز عثمان غنی عادلؔ نے آخری  دِنوں میں اُن کا ایک شعری مجموعہ ’’متاعِ ہنر‘‘کے نام سے شائع کروادِیاتھا۔ دخترِ سروش اور ہماری شبو آپا نے اپنے بابو کی رثائی شاعری پر مبنی ایک کتاب’ متاعِ زندگی‘ اپنے مصارف سے شائع کی۔
’متاعِ ہنر‘ کے ذکر پر ایک علمی واقعہ بھی یہاں درج ہوجائے کہ اس شعری مجموعے پر کچھ لکھنے کےلئے سردار جعفری سے عثمان غنی عادل نے گزارش کی اور مسودہ علی سردار جعفری کو دے آئے۔ جب   عادلؔ مرحوم ، ایک دن جعفری کا مضمون لینے سیتا محل ؔپہنچے تو جعفری مرحوم نے اپنے مضمون کے ساتھ مسودہ بھی دیا اور کہا کہ عادل صاحب محمودسروش نے ایک مطلعے میں لفظ  سِہَر(Sihar) اِستعمال کیا ہے  ، یا تو  مَیں اس لفظ کے معنیٰ سے نا آشنا ہوں یا پھر یہ لفظ غلط ہے۔ 


عادل مرحو م بہت بجھے بجھے سے ہمارے پاس آئے۔ ہوٹل میں  لے گئے اور سارا ماجراکہہ سنایا۔ ہم بھی حیران کہ ایساکیسے ممکن ہے کہ محمود سروش اور غلط لفظ کااستعمال۔۔۔!
عادل ؔمرحوم نےمسودے کی ایک غزل  میںمطلع کی نشاندہی کی ، ہم نے اس کا پہلا مصرع پڑھا، اتفاق کہ مصرعے کا  وہ اوّلین لفظ ہی تھا ، اب ہمیں بھی اطلاع ملی کہ’’ میاں  ندؔیم! تم بھی اس لفظ سے بے خبر ہو۔‘‘
’سِہَرْ‘ اٹھتا ہے  دِل پہلے پہل جب  پیار پاتا ہے
بڑی دیر تک ہم دونوں حیرا ن پریشان رہے ۔چائے پینے کے بعد جیسے کسی  نے سوئی چبھوئی کہ ’’میاں ! ذرا دوسرا مصرع بھی تو دیکھو اورپڑھو کہ اس میں کیا کہا گیا ہے۔۔۔! ‘‘
دوسرا مصرع پڑھا تو پشیمانی کی کیفیت سے گزرنا پڑا کہ مصرعۂ ثانی میں  قافیے کی صورت، شاعر نے خود  اس لفظ کے معنی بتا دِیے تھے۔ ہم نے جب  عثمان غنی عادلؔ کو بتایا تو وہ اُچھل پڑے اور جیسے اُن کی دِلی مراد پوری ہوگئی ہو، فوراً ہوٹل کے بیرے کو  بلا کر آرڈر دِیا کہ’’ میرے ندیمؔ کےلئے کوئی مٹھائی  لاؤ۔میں تو پہلے ہی سوچ رہا تھا کہ سرکار( سروش مرحوم کے شاگرد اسی لفظ سے اپنے اُستاد کو یاد کرتے تھے) اور غلط لفظ۔۔۔!! یہ کیوں کرممکن ہے۔۔۔؟‘‘۔۔۔   اس مطلع کاثانی مصرع یوں تھا:


سِکورہ بھیگ کر پانی میں جیسے سنسناتاہے
جو لوگ   یوپی  کے دیہات میںرہ چکے ہیں اُن میںاکثر اصحاب، ہندی  کے اس  لفظ ’سِہَر‘سے ضرور آشنا ہوںگے۔مِٹّی کے برتن میں جب پہلی بار پانی پڑتا ہے تو ایک آواز سَن کی سی آتی ہے اسی کیفیت کو  ’سِہَر‘ کہتے ہیں۔ جعفری مرحوم بلرام پور کے رہنے والے تھے اور وہاں بھی یہ لفظ بولا جاتا ہے۔
’’ سردار جعفری اس لفظ سے نا آشنا تھے ۔۔۔‘‘
یہ سوچ کر ہمیں حیرت  رہی مگر کچھ دِنوں بعد جب یہ پتہ چلا کہ سردار جعفری  دماغ کی کسی گمبھیر بیماری میں مبتلا ہیں اور اس عارضے نے اُن کی یادداشت کو بھی  بُری طرح متاثر کیا  ہے، تو سمجھ   میںیہ بات آئی کہ جب وہ محمود سروش کا مسودہ دیکھ رہے تھے تو  یہ عارضہ اُنھیں اپنی گرفت میں لے  چکاتھا۔
محمود سروش ایک عَالِم اور اعلےٰ درجے کے شاعرو ادیب تو تھے ہی مگر ایک شفیق شخص بھی ان کے اندرون میں موجود تھا۔ ہمارے بزرگ ان کے ساتھ عزت وتکریم سے پیش آتے  تھے ۔ یعنی   ہم ان کے سامنے بہر حال خرد ہی تھے۔ ایک دن انجمن اسلام اسکول(  نزدوِی ٹی  ریلوے اسٹیشن) کے باہر مل گئے۔ ہم نے سلام کیا اُنہوں نے گھر کے لوگوںکی خیریت وغیرہ دریافت کی۔ بعدہٗ ہم نے عرض کیا ، سروش صاحب! چائےپی جائے۔۔۔۔۔     اُنہوں نے کہا:’’ ہاں ہاں‘‘ 


اُ   س  زمانے میں اِس اسکول  کے آس پاس کوئی ریسٹورنٹ یا ہوٹل وغیرہ نہیں تھا یا تو کِپیٹل سنیما یا پھر اب جہاں  نیا حج ہاؤس ہے، وہاں
(انجمن سے)قدرے فاصلے پر ایک ہوٹل تھا( اب بھی ہے) اس ہوٹل میں جاکرچائے پی گئی ہم   چائے   پی کر جلدی سے   بِل کی ادائیگی کیلئےہوٹل کے کاؤنٹر کی طرف  بڑھے تو پیچھے سے اُتنی ہی سرعت کے ساتھ سروش صاحب آئے اور کہنے لگے:’’ ندیم ؔمیاں! کیا اِتنے بڑے ہوگئے ہو ؟ ‘‘
ہم اُن کے اِس جملے پر خجل ہو کر رہ گئے۔۔ ۔ !
اس واقعے کو کوئی تیس برس سے  زائد  مد ت گزر ر ہی  ہے  ، یقیناً آج ہماری عمر تو ضرور بڑھی مگر سچ یہ ہے کہ ہم اب تک سروش صاحب کے اس جملے کو بھول سکے اور نہ بڑے ہو سکے۔
( ممبئی کے شعرا  نامی ایک طویل مضمون سے اقتباس)