نوٹ بندی کے بعد کئی کمپنیوں نے کیا کالے دھن کو سفید،کھیل کا بھانڈا پھوٹا

0
97
1 of 2

نئی دہلی: گذشتہ سال 8 نومبر کو اعلان نوٹبندي کے بعد کالے دھن کو سفید کرنے کے کھیل کو اس چالاکی سے کھیلا جا رہا تھا کہ حکومت کو بھی وہاں تک پہنچنے میں کافی مشقت کرنی پڑی. لیکن اب حکومت کو 13 بینکوں نے 5،800 ماسک کمپنیوں کے بارے میں اہم معلومات دی ہے جس سے پتہ چلا ہے کہ کالے دھن کے سوداگروں نے نوٹبندي کے دوران حکومت کو ہر ممکن طریقے سے چھكانے کی کوشش کی.

ایسا کھیل
ان 13 بینکوں نے اپنی رپورٹ میں حکومت کو 2،09،032 مشتبہ کمپنیوں میں سے کچھ کے بینک اکاؤنٹس کے آپریشن اور نوٹبندي کے بعد کے جمع-آب کو لے کر بے حد اہم معلومات دی ہے. اسی سال میں کمپنیوں کے رجسٹرار نے ان تمام کمپنیوں کے رجسٹریشن کو منسوخ کردیا تھا. بیان کرتے ہیں کہ ادائیگی معطل کرنے کے بعد، ان اداروں کی بینک اکاؤنٹنگ کے عمل کو روک دیا گیا ہے. اس میں، صرف قرض کی ادائیگی مستحکم ہے.

بینکوں کی طرف سے حکومت کو سب سے اہم معلومات نوٹ لینے کے دوران ان اکاؤنٹس میں جمع کردہ ذخائر سے منسلک ہوتا ہے. کمپنیوں سے قرض اکاؤنٹس الگ ہونے کے بعد، ان 5،800 کمپنیوں کے اکاؤنٹس میں 8 نومبر، 2016 کو ان میں 22.05 کروڑ رو. تھے. لیکن 9 نومبر 2016 (نوٹبدي نافذ ہونے کے بعد) سے رجسٹریشن منسوخ کئے جانے تک کی مدت میں ان کمپنیوں نے 4573.87 کروڑ روپے کی رقمیں جمع كرواي اور 4،552 کروڑ روپے کی منظوری بھی کی.

READ MORE

1 of 2