دشمن جائیداد پر 5 ویں بار دستخط کرنے سے ناراض صدر، پڑھیں پورا معاملہ

0
31
enemy property

نئی دہلی،:جنگ کے بعد پاکستان اور چین چلے گئے لوگوں کی املاک پر جانشینی یا جائیداد کی منتقلی کے دعووں کی حفاظت کے لئے تقریبا 50 سال پرانے ایک قانون میں ترمیم پر آرڈیننس کو پھر نافذ کیا گیا ہے. تاہم صدر پرنب مکھرجی نے اس سال پانچویں بار دشمن جائیداد آرڈیننس پر دستخط کرنے کو لے کر اپنی دکھ کا اظہار کیا ہے.

enemy property

ذرائع نے بتایا کہ آرڈیننس کو اپنی منظوری دینے سے پہلے صدر نے اس بات پر اپنی مایوسی ظاہر کی کہ آرڈیننس کو پانچویں بار نافذ کیا جا رہا ہے اور یہ حکومت کی غلطی ہے کہ وہ اس بل کو پارلیمنٹ میں منظور نہیں کر پائی. ذرائع کے مطابق صدر نے دشمن جائیداد آرڈیننس پر دستخط قومی مفاد اور جنوری میں سپریم کورٹ کے سامنے آنے والے التوا میں رہے امور کے پیش نظر کیا ہے.

 

دشمن جائیداد (ترمیم اور ویدیکرن: پانچواں آرڈیننس، 2016 کو پہلی بار سات جنوری کو لاگو کیا گیا تھا. ابھی سے پہلے اسے چار بار جاری کیا جا چکا ہے. مرکزی کابینہ نے بدھ کو آرڈیننس کو دوبارہ جاری کرنے کی منظوری دے دی تھی. آرڈیننس کو دوبارہ جاری کیا گیا کیونکہ نوٹبندي کے معاملے پر پارلیمنٹ کی کارروائی میں مسلسل رکاوٹ رہنے کے چلتے اس سے منسلک قانون میں ترمیم کے لئے بل منظور نہیں کرایا جا سکا. مکھرجی نے گزشتہ سال جنوری میں حکومت کو مشورہ دیا تھا کہ صرف غیر معمولی حالات میں ہی حکومت کو آرڈیننس لانا چاہئے.

enemy property

 

اگست میں یہ آرڈیننس چوتھی بار صدر کے پاس پہنچا لیکن کابینہ نے اس کی منظوری نہیں دی تھی. آزادی کے بعد ایسا پہلی بار ہوا تھا. صدر نے اس وقت حکومت سے کہا تھا کہ وہ اس پر اس لیے دستخط کر رہے ہیں کیونکہ اس میں عوام کی بھلائی سے منسلک ہے لیکن انہوں نے خبردار بھی تھی کہ آگے سے کابینہ کی منظوری کے بغیر ایسا کچھ نہیں ہونا چاہئے. اس کے بعد ہی حکومت نے مبینہ طور پر کابینہ سے منظوری لی تھی.

 

تقریبا پانچ دہائی پرانے دشمن جائیداد قانون میں ترمیم کے لئے یہ پہل کی گئی ہے تاکہ جنگ کے بعد پاکستان اور چین چلے گئے لوگوں کی جائیداد کی جانشینی یا منتقلی کے دعووں کی حفاظت کی جا سکے.

enemy property

کیا ہوتی ہے دشمن جائیداد؟
کوئی بھی ایسی جائیداد جو دشمن ملک یا اس کے کسی فرم سے متعلق ہو وہ دشمن جائیداد کہلاتی ہے. پورے ملک بھر میں ایک لاکھ کروڑ روپے کی قیمت کے 16547 دشمن جائیدادیں ہیں. مرکزی وزارت داخلہ دشمن جائیداد کے سرپرست (کسٹوڈین) کے طور پر کام کرتا ہے.

enemy property

قانون میں ترمیم کی ضرورت کیوں
محمود اباد کے راجہ ایم اے ایم خان نے اپنی املاک پر دعوے کے لئے سپریم کورٹ کا دروازہ کھٹکھٹایا تھا. جس کے بعد مرکزی حکومت نے اس سال 1968 کے دشمن جائیداد قانون میں ترمیم کرنے کا فیصلہ کیا. 1962 میں چین سے لڑائی کے بعد ملک میں کچھ چینی شہریوں کی جائیداد حکومت ہند کے پاس ہے. ویسے ہی 1965 اور 1971 کی پاکستان سے جنگ کے بعد پاک شہریوں کی چل اور رئیل اسٹیٹ براہ راست طور پر ہندوستان کی حکومت کی حراست میں چلی گئی.

enemy property