بی سی سی نے یوسف پٹھان کو ڈوپنگ کے خلاف ورزی پرمعطل کردیا

0
26

ممبئی: بی سی سی نے بھارتی کرکٹر یوسف پٹھان کو ڈوپنگ کی خلاف ورزی کرنے کے الزام میں معطل کر دیا ہے. منگل کو جاری کردہ بیان میں، بی سی سی آئی نے کہا ہے کہ ممنوعہ مادہ کے استعمال کے لئے معطل کردیا گیا ہے. یہ مادہ عام طور پر کھانسی کے شربت (کھانسی کی دوا) میں پایا جاتا ہے.

یاد رہے، یہ معطلی ان کے آئی پی ایل کی نیلامی کے عمل کو متاثر نہیں کرے گا.

یوسف پٹھان نے اینٹی ڈوپنگ ٹیسٹنگ پروگرام کے دوران، 16 مارچ، 2017 کو پٹھان نے نئی دہلی میں گھریلو ٹی 20 میچ کے تحت پیشاب کا نمونے دیا. ان کے نمونے کی جانچ پڑتال کی گئی تھی اور اس میں محدود مادہ کی مقدار ‘تبرولیٹن’ ملی تھی.

یہ ایک ایسی چیز ہے جس میں ورلڈ اینٹی ڈوپنگ ایجنسی (WADA) کے ممنوع منشیات کی فہرست میں شامل ہے. اس صورت میں پٹھان پر 27 اکتوبر، 2017 کو بی سی سی آئی مخالف ڈوپنگ قوانین (اے ڈی آر) آرٹیکل 2.1 کے تحت ایک ڈوپنگ مخالف قوانین خلاف ورزیکا الزام لگایا گیا تھا اور عارضی طور پر معطل کیا گیا تھا.

پٹھان نے اینٹی ڈوپنگ قوانین کی خلاف ورزی کی بات قبول کی اور کہا کہ انہیں جو ادویات لکھی گئی تھیی، اس کے علاوہ انہیں کوئی اور دوائیں دی گئیں، جس میں ‘ٹبريوٹےلن’ کی مقدار شامل تھی. پٹھان نے کہا کہ اگرچہ انہوں نے جان بوجھ کر اس دوا کی مقدار نہیں لی ہے اور اس کے استعمال کا مقصد صرف گلے میں جاری انفیکشن سے چھٹکارا حاصل تھا، نہ کہ اس کی کارکردگی کو بہتر بنانا تھا.

بی سی سی آئی نے پٹھان کے وضاحت کو مانا اور اس بات کو سمجھا کہ اپر ریسپاریٹري ٹریكٹ انفیکشن کے علاج کے لئے انہیں غلطی سے ‘ٹبريوٹیلن’ دیا گیا.

اس بات کو مانتے ہوئے بی سی سی آئی نے پٹھان پر پانچ ماہ کی معطلی کی۔ جو 15 اگست، 2017 سے لاگو ہوئی ہے اور یہ معطلی 14 جنوری، 2018 کو ختم ہو جائے گا. دریں اثنا، گھریلو کھیل میں والے میچوں کے نتائج بھی منسوخ کئے جا سکتے ہیں.