امریکہ کی فراخدلی روہنگیا مسلمانوں کو 3.2 ملین ڈالر امداد دے گا

0
38

نیویارک: میانمار میں جاری تشدد کی وجہ پڑوسی ملک بنگلہ دیش ہجرت کرنے والے روہنگیا مسلمانوں کو امریکہ انسانی امداد کے طور پر 3.2 کروڑ ڈالر کی رقم دے گا.

 

امریکی وزارت خارجہ کے قائم مقام اسسٹنٹ سیکرٹری سمون هینشا نے نیویارک میں جاری اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں بدھ کو کہا کہ یہ مدد غیر متوقع عذاب سے گزر رہے روہنگیا مسلمانوں کو انسانی امداد فراہم کرنے کی امریکہ کی عزم کی عکاسی کرتا ہے.

سی این این کی رپورٹ کے مطابق، سمون نے کہا کہ امریکہ کو امید ہے کہ اس کا یہ شراکت دیگر ممالک کو بھی روہنگیا مسلمانوں کو مدد فراہم کرنے کے لئے حوصلہ افزائی کرے گا.

یہ اعلان وزیر خارجہ ریکس ٹلرسن طرف میانمار کی اسٹیٹ کونسلر آنگ سان سو چی کی سے بات کرنے اور رخائین میں تشدد ختم کرنے کی میانمار حکومت کے عزم کا خیر مقدم کرنے کے ایک دن بعد آئی ہے.

ٹلرسن نے میانمار کی حکومت اور فوج کی طرف سے متاثر علاقوں میں مہاجرین کو انسانی امداد فراہم کرنے اور انسانی حقوق کے خلاف ورزیوں کے الزامات کو لے کر قدم اٹھانے کی اپیل کی ہے.

وزارت خارجہ نے ساتھ ہی کہا کہ اس مدد سے ‘بے گھر ہوئے چار لاکھ سے بھی زیادہ لوگوں کو ہنگامی پناہ گاہ، کھانے کی حفاظت، غذائیت، صحت کی سہولیات، منووےجنانك سهيوگ، پانی، حفظان صحت وغیرہ فراہم کرنے میں مدد ملے گی.’

هینشا نے کہا کہ بدھ کے اعلان کے بعد مالی سال 2017 میں روہنگیا سمیت میانمار کے پناہ گزینوں کو امریکہ کی طرف سے فراہم کی جانے والی کل امداد قریب 9.5 ملین ڈالر ہو گئی ہے.