مودی سرکار نے حاجیوں کےلئے سبسیڈی ختم کی

0
55

نئی دہلی: مرکز کی مودی حکومت نے بڑے فیصلے کے ذریعے حج سفر سبسڈی ختم کردی ہے. مرکزی اقلیتی کے وزیر مختار عباس نقوی نے اس بارے میں معلومات فراہم کی کہ یہ فیصلہ اقلیتوں کو باضابطہ طور پر اپیل کرنے کے ایجنڈا کا حصہ ہے. نقوی نے کہا ہے کہ حج سبسڈی کی مالی امداد مسلم لڑکیوں اور عورتوں کو تعلیم فراہم کرنے پر خرچ کی جائے گی. انہوں نے کہا کہ سبسڈی کا فائدہ ایجنٹوں کو بڑھا رہا تھا لہذا حج سبسڈی روک دی گئی ہے. غریب مسلمانوں کے لئے مختلف انتظامات کئے جائیں گے. یہ فیصلہ 1.75 لاکھ حاجیوں کو متاثر کرے گا.

آپ کو بتا دیں کہ ہر سال 700 کروڑ روپے حج سبسڈی کی شکل میں خرچ کی جاتی ہے. ایک چیز یہ بھی ہے کہ اس فیصلے کو سپریم کورٹ کے حکم کے بعد حکومت نے لے لیا ہے. سال 2012 میں، عدالت نے مرکزی حکومت کو حکم دیا کہ وہ سبسڈی کو ختم کردیں. عدالت نے حکم دیا ہے کہ 2022 تک حج سبسڈی کو مکمل طور پر ختم کردیا جانا چاہئے.

سعودی عرب کے جدہ میں ہندوستان کے قونصل جنرل رہے اور نئی حج پالیسی کا مسودہ تیار کرنے والے سابق آئی اے ایس امان اللہ کہتے ہیں ‘حکومت چاہے تو 45 سال سے کم عمر کی خواتین کو بھی محرم کے بغیر حج پر جانے کی اجازت دے سکتی ہے، بالغ اگر لڑکا حج پرجا سکتا ہے تو پھر بالغ لڑکی میں کیا نقصان ہے؟