جس اسکول میں ہندو بچے زیادہ ہ ہیں وہاں کرسمس نہ منایا جائے۔ہندو تنظیم کی وارنگ

0
264

علی گڑھ: ہندو جاگرن منچ نے عیسائی اسکولوں کو خبردار کیا ہے کہ ان اسکولوں میں کرسمس نہ منائے جائیں، جہاں ہندو طالب علموں کی اکثریت ہے. فورم کا دعوی ہوتا ہے کہ یہ مذہب کی تبدیلی کی طرف ایک قدم ہے.

انگریزی اخبار ٹائمز آف انڈیا سے بات چیت میں ہندو جاگرن منچ کے شہری صدر سونو سوتا نے دعوی کیا، کہ ‘عیسائی اسکولوں میں کرسمس منانے کے لئے ہندو طالب علموں سے کھلونے اور گفٹ لانے کو کہا جاتا ہے. یہ عیسائیت کو لبھانے کا ایک آسان طریقہ ہے. ‘


انہوں نے مزید کہا، “ہم اس سلسلے میں بچوں کے والدین سے بات کر رہے ہیں. تاکہ وہ اس طرح کی سرگرمیوں پر تنقید کریں. ‘انہوں نے مزید کہا،’ اس طرح کی سرگرمیوں سے ہندو طالب علموں کی ذہنیت کو متاثر کیا جا سکتا ہے. فورم پیر (17 دسمبر) کو تمام عیسائی اسکولوں کو خط جاری کر اس نوعیت کی سرگرمیوں کو روکنے کے لیے کہے گا. ‘

وہیں، ہندو جاگرن منچ کی وزیر خارجہ سنجو بجاج کا کہنا ہے، کہ ‘اگر اسکول ان ہدایات پر عمل نہیں کریں گے، تو اداروں کے باہر مظاہرے کئے جائیں گے.’

جبکہ، اس سلسلے میں علی گڑھ کے کلکٹر رشی کیش بھاسکر يشودا نے کہا، کہ ‘انہیں ہندو جاگرن منچ کی جانب سے دئے گئے ایسے کسی انتباہ کی معلومات نہیں ہے. انہوں نے کہا کہ ایسی سرگرمی برداشت نہیں ہوگی. کسی بھی اقدام کو جو تہواروں کو روک دے گا، اس کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی. کوئی تنظیم اپنےہاتھ میں قانون نہیں لے سکتا. ‘

Facebook Comments