پاکستان سے لاپتہ ہوئے حضرت نظام الدین درگاہ کے اہم سجادہ ناشين پہنچے دہلی، اہل خانہ سے ملے

0
13

لکھنؤ: کچھ دنوں پہلے خبر آئی تھی کہ حضرت نظام الدین اولیاء درگاہ کے اہم سجادہ ناشين پاکستان میں لاپتہ ہو گئے ہیں. لیکن اب خبر ہے کہ دونوں سجادانشين پیر 20 مارچ کو پاکستان سے ملک واپس آئے. دہلی ایئر پورٹ پر ان کے اہل خانہ نے ان کا استقبال کیا. اتوار کو سشما سوراج نے بتایا تھا کہ حضرت نظام الدین اولیاء درگاہ کے اہم سجادہ ناشين آصف علی نظامی اور ان کے بھتیجے ناظم علی نظامی کو پاکستانی انٹیلی جنس ایجنسیوں نے رہا کر دیا ہے. انہوں نے رہائی کے لئے نواز شریف کے خارجہ امور کے مشیر سرتاج عزیز سے بات کی تھی.

hazrat nizam uddin
 اس معاملے پر یہ باتیں آئی سامنے
خادم اور ناظیم نظامی لاہور کی ڈونر دربار درگاہ پر گئے تھے. انہیں وہاں سے واپس آنے کے لئے کراچی کی پرواز میں بیٹھنا تھا. ان کے خاندان کے لوگوں کا کہنا تھا کہ آصف نظامی کو لاہور ایئر پورٹ پر ادھورے سفری دستاویزات ہونے کا سبب بتا کر روکا گیا تھا. ایک ذرائع نے بتایا تھا کہ خادم لاہور ایئرپورٹ سے جبکہ دوسرے مولوی کراچی ایئرپورٹ سے لاپتہ ہو گئے. ہندوستان کی حکومت نے اور اسلام آباد میں موجود بھارتی سفیر نے یہ معاملہ حکومت پاکستان کے سامنے اٹھایا. بتایا گیا کہ یہ دونوں مولوی اپنے رشتہ داروں سے ملنے کراچی گئے تھے. اس کے بعد وہ لاہور میں داتا دربار کی درگاہ پر گئے تھےلبے وقت سے ڈونر دربار اور نظام الدین درگاہ کے خادم ایک دوسرے کے یہاں آتے جاتے رہے ہیں.

hazrat nizam uddin
پھر پاک پر لگا الزام
پاکستانی میڈیا میں خبریں آئیں کہ آئی ایس آئی نے دونوں علماء کو غائب کروایا ہے. پاک انٹیلی جنس ایجنسیوں کو شک تھا کہ دونوں کا تعلق مہاجر قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) سے ہو سکتا ہے. تاہم سرکاری طور پر پاک حکومت کہتی رہی کہ آصف اور ناظم آپ یاتریوں سے ملنے سندھ کے اندرونی علاقوں میں گئے تھے اور وہاں موبائل سروس نہ ہونے کی وجہ سے ان کے خاندان سے رابطہ نہیں ہو پا رہا تھا.