راہل گاندھی بھی وزیراعظم کے مرید بن گئے، کہا وہ ایک بہتر اسپیکر ہیں

0
101

واشنگٹن: وزیراعلظم نریندر مودی کی تقریر سے بہرحال کافی لوگ متاثر ہوتے ہیں۔ اب اس فہرست میں، کانگریس کے نائب صدر راہل گاندھی بھی شامل ہوگئے ہیں۔

حال ہی میں امریکہ میں برکلے کیلیفورنیا میں راہل گاندھی کو مدعو کیا گیا تھا، جہاں انہوں نے بہت سے مسائل پر بات کی. سب سے پہلے، انہوں نے کشمیر کے مسئلے پر تبادلہ خیال کیا، بعد میں انہوں نے مودی کو خود سے بہتر اسپیکر کہا.

راہل گاندھی کہتے ہیں
پی پی مودی کے بارے میں بات کرتے ہوئے، راہل گاندھی نے کہا کہ میں اپوزیشن کا رہنما ہوں لیکن نریندر مودی بھی میرے پرائم منسٹر ہیں۔ وہ مجھ سے بہتر اسپیکر ہیں. لوگوں کو پیغام دیتا انکو خوب آتا ہے. لیکن وہ بی جے پی کے رہنماؤں کی نہیں سنتے. مجھے ‘صاف بھارت’ کا آئڈیا بھی اچھا لگتا ہے۔

خارجی پالیسی میں بیلنس ضروری ہے. سری لنکا، مالدیپ، نیپال، برما میں چین کے بڑھتے ہوئے اثرات آج روس پاکستان کو ہتھیار فروخت کررہا ہے، اس سے پہلے کہ امریکہ سے دوستی صحیح نہیں ہے. لیکن دیگر ممالک کے ساتھ تعلقات کو درست کرنے کی ضرورت ہے. میں نے امریکہ سے بہت کچھ سیکھا ہے اور اب میں ہندوستان میں لاگو کر رہا ہوں. لیکن کسی بھی چیز کو براہ راست نافذ نہیں کیا جاسکتا۔

اس کے علاوہ، برکلے یونیورسٹی میں کیلیفورنیا کے راهل گاندھی نے کہا کہ دائیں ونگ رہنما کہتے ہیں کہ ایک جگہ جاو. میرے نانا نے بھی ایک تقریر کی. مجھے بھی مدعو کرنے کے لئے شکریہ.

کشمیر کے مسئلے پر راہل گاندھی
کشمیر کے مسئلے پر راہل گاندھی نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ 9 سال تک میں نے کشمیر، چدمبرم، منموہن سنگھ، جئے رام نریش کے ساتھ کام کیا، جب میں نے کام شروع کیا. پھر کشمیر میں بہت زیادہ دہشت گردی تھی؛ 2013 میں منموہن کی سب سے بڑی کامیابی تھی جس میں کشمیر میں دہشت گردی کو کم کرنا آپ کی سب سے بڑی کامیابی ہے. اس پر ایک بڑا لیکچر دینے کے بجائے، ہم نے پنچایتی راج پر کام کیا.

معیشت نقصان پہنچ گئی
بھارت میں ملازمت پیدا کرنے کی کمی ہے، بھارت کو ملازمت پیدا کرنے کی ضرورت ہے. چین کی پالیسی کے تحت، روزگار پیدا نہیں کر سکتے ہیں، یہ ایک جمہوری انداز میں کیا جانا چاہئے. نوٹ بندی نے ملک کی معیشت کو نقصان پہنچایا اور ہمارے جی ڈی پی میں 2 فیصد گراوٹ آئی ہے۔