شیو پال نے نکالی اکھلیش پر بھڑاس، کہا سماجوادیوں کی نہیں، باطل کی شکست ہے

0
4

لکھنؤ: بھتیجے سی ایم اکھلیش یادو کے ہاتھوں بار بار ذلیل ہونے والے چچا شوپال سنگھ یادو نے انتخابات کے نتائج کے بعد جم کر اپنی بھڑاس نکالی. انہوں نے کہا یہ ہار سوشلسٹوں کی نہیں، بلکہ باطل ہے. سوشلزم کبھی ہار ہی نہیں سکتا. اس انتخاب میں گھمنڈ ہارا ہے اور باطل کی تو ہمیشہ ہار ہوتی ہے.

شیو پال یادو کے مطابق، اکھلیش نے نہ صرف ان ہٹا دیا بلکہ نیتا جی ملائم سنگھ یادو کو بھی ذلیل کر ایک کنارے بیٹھا دیا. جس پارٹی کو ملائم سنگھ یادو نے اپنے پسینے سے سینچا تھا، اس پر وزیر اعلی اکھلیش یادو نے قبضہ کر لیا.

کانگریس ایس پی اتحاد سے بھی نہیں بنی بات
اکھلیش یادو نے والد ملائم سنگھ اور چچا شوپال کے نہ چاہتے ہوئے بھی کانگریس کے ساتھ اتحاد کر لیا. انہیں لگا کہ اگر سائیکل کے ہینڈل پر ہاتھ لگ جائے گا تو یوپی میں ایک بار پھر انہیں اقتدار مل جائے گی، لیکن نتائج میں کچھ اور ہی سامنے آیا. اتحاد مکمل طور پر اکھلیش کو یوپی میں لے ڈوبا. اتحاد نے ایس پی نے کانگریس کو 105 سیٹیں دیں، جس کے بعد ایس پی کارکن اور پارٹی کے امیدوار بھی دو خیموں میں بٹ گئے.

shivpal

کب شروع ہوا تھی سماجوادی پارٹی میں اختلاف؟
ملک کے سب سے بڑے سیاسی کنبے میں اختلاف گزشتہ سال ستمبر اکتوبر میں شروع ہوئی تھی. شہ مات کے کھیل میں کبھی اکھلیش یادو سے ریاستی صدر کا عہدہ لیا گیا تو اکھلیش نے بدلے میں چچا شوپال سنگھ یادو کو م़ترمڈل سے باہر کا راستہ دکھا دیا. آہستہ آہستہ پورا خاندان دو دھڑے میں بٹ گیا.

ایک طرف نرم اور ان کے بھائی شیو پال سنگھ یادو تھے تو دوسری طرف اکھلیش کے ساتھ ان کے چچا رام گوپال یادو تھے. اس کے علاوہ خاندان کے دیگر اراکین بھی اکھلیش کے ساتھ ہی کھڑے دکھائی دیے. اس کے بعد انتخابی مہم سے ملائم نے کنارہ کر لیا یا یوں کہیں کہ انہیں کنارے کر دیا گیا.

shivpal

انہوں نے بھائی شیو پال کے لئے جسونت نگر اور چھوٹی بہو ارپنا کے لئے لکھنؤ کینٹ ہی تبلیغ کی. شیو پال یادو بھی صرف جسوتنگر کی اپنی سیٹ تک ہی محدود رہے. نرم اور شیو پال کی جس جوڑی نے 2012 میں ایس پی کو یوپی کے اقتدار دلائی، کانگریس اور بی جے پی کو باہر کیا، وہی اس انتخاب میں گھر بیٹھ گئی.

shivpal