٢٢٠٠ خواتین کی بچہ دانی نکالنے والے ریکیٹ کا انکشاف، کھیل میں چار اسپتال بھی شامل

karnataka

نئی دہلی: کرناٹک کے كلبرگي میں ایک ایسے ریکیٹ کا پردہ فاش ہوا ہے، جو خواتین کی بچہ دانی نکالنے کا کام کرتا تھا. ان کے اس کام میں چار اسپپتالوں کے شامل ہونے کی اطلاع بھی سامنے آئی ہے.

غور طلب ہے کہ یہاں کے مقامی لوگ گزشتہ دو برسوں سے اس مسئلے کو اٹھا رہے ہیں باوجود اس کے ابھی تک ہسپتالوں کے خلاف کارروائی نہیں ہوئی ہے.

hospitals

خواتین کی عمر اوسطا چالیس سال
-خبرو ں کے مطابق، اب تک 2،200 خواتین کی بچہ دانی نکالے جانے کا معاملہ سامنے آیا ہے.
-یہ تمام خواتین لباني اور دلت کمیونٹی سے تعلق رکھتے ہیں.
-متاثرہ خواتین کی عمر اوسطا چالیس سال تک ہے.
-پیٹ میں درد کی شکایت کے بعد جب وہ اسپتال پہنچی تو ڈاکٹر نے انہیں پیٹ میں کینسر بتا کر ڈرا دیا.
-کے ساتھ ہی بچہ دانی (يوٹرس) نکالنے کی صلاح بھی دی.
-خواتین نے خوف سے اپنا بچہ دانی نکلوا دیا.

hospitals

٢٠١٥میں کارروائی کا دیا تھا اعتماد
-سوموار کو ہزاروں خواتین نے ایک غیر سرکاری تنظیم (این جی او) کے ساتھ مل کر مظاہرہ کیا.
-متاثرہ خواتین نے اسپتالوں کا لائسنس ضبط کرنے کا مطالبہ کیا.
-خواتین نے کہا، مقامی انتظامیہ کو اس معاملے کی معلومات ہے.
-سركار کی بھی تنقید کی.
-بتا دیں کہ سال 2015 میں محکمہ صحت کی جانچ کمیٹی نے ان ہسپتالوں کے لاسےس ضبط کرنے کا بھروسہ دیا تھا.
-لیکن آج بھی یہ اسپتال دھڑلے سے چل رہے ہیں.