بج رہا باجا، دھوم دھام سے سج رہی بارات لیکن دولہا اب بھی ندارد

Prev1 of 11
Use your ← → (arrow) keys to browse
Yogesh Mishra

یوگیش مشرا

لکھنؤ: گزشتہ 11 تاریخ کو ہی سج دھج کر لک-دك بارات آ گئی. اقتدار نام کی کنیا ورمالا لے کر کھڑی ہو گئی پر یہی طے نہیں ہو پا رہا ہے کہ دولہا ہے کون. یہ بھارتی جنتا پارٹی (بی جے پی) کے حالیہ دور کے لئے انوکھی بات لگتی ہے کیونکہ 2014 کے بعد پارٹی اس دور میں ہے، جہاں سب کچھ ‘کلیئر’ ہے.

اقتدار کا مرکز کلیئر ہے- نریندر مودی اور امت شاہ، تیسرا کوئی نہیں. مینڈیٹ کلیئر ہے. تو بھی 200 گھنٹوں کا راز انتخابات کے نتائج کے اسرار سے بھاری پڑ رہا ہے. کون بنے گا وزیر اعلی کی اٹکل بتاتی ہے کہ تذبذب میں ہے بی جے پی. وہ بی جے پی کو مہاراشٹر، ہریانہ، جھارکھنڈ میں فوری طور پر نام دے پائی تھی. منی پور اور گوا میں نام تلاش کرنے میں دقت نہیں ہوئی، اس اترپردیش میں کیوں مشکل ہو رہی ہے؟

Read More>>>>>

Prev1 of 11
Use your ← → (arrow) keys to browse