مسلم جنازے کے دفنانے کے خلاف ہندوؤں کا احتجاج علی گڑھ میں کشیدگی

0
47

علی گڑھ: علی گڑھ ضلع میں جمعرات کو دو فرقوں کے درمیان ایک میت کو دفن کو لے کر کشیدگی ہو گئی. ایک مذہب کے میت کو شمشان میں دفن کی دوسری کمیونٹی نے مخالفت کی. دراصل، جس زمین پر شمشان ہے، سرکاری دستاویزات میں وہ شمشان کے لئے ہی مختص ہے. گزشتہ چند سالوں کے لئے، دونوں کمیونٹیز نے اسے اپنےعقائد کے لئے آخری رسوم کے لئےاستعمال کرتے رہے۔

گزشتہ سال سے جب یہ بات سامنے آئی کہ زمین شمشان کے لئے مختص ہے، تو ایک کمیونٹی کے کچھ لوگوں نے وہاں لاش دفن کر نےکی مخالفت شروع کر دی.

یہ معاملہ ہے
انگریزی اخبار ‘ٹائمز آف انڈیا’ (ٹيواي) کو مقامی رہائشی محمد عقیل نے بتایا، کہ ‘گزشتہ سال ایک خاندان نے جب زمین کے قبرستان مانے جانے والے حصے میں لاش کو جلایا، تو دوسرے کمیونٹی نے اس پر اعتراض کیا. تنازعات کو بڑھانے کے لئے پولیس کو بلایا گیا تھا. لیکن جب یہ سامنے آیا کہ زمین کا وہ حصہ بھی شمشان کے لئے ہے تو معاملہ ٹھنڈا پڑ گیا. بتا دیں کہ محمد عقیل دفنائے جا رہے محمد شمس الدین کے بھتیجے ہیں.

واقعہ کیا ہے
یاد رہےکہ یہ واقعہ علی گڑھ کے سلیم پور گاؤں ہے. اخبار کو گاؤں کے چوکیدار نے بتایا، کہ ‘ہماری کمیونٹی کے لوگوں نے دفن کرنے سے روکا، کیونکہ وہ زمین شمشان کی ہے اور دوسرے کمیونٹی کو اس کا استعمال کرنے کی اجازت نہیں ہے.’

کیا کہ ایس ڈی ایم نے

مقامی آل ڈوجنل مجسٹریٹ پنکج ورما نے اخبار کو بتایا، کہ ‘گزشتہ کئی سالوں سے زمین کا استعمال دونوں فرقہ کے لوگ کرتے رہے ہیں. لیکن جب یہ بات سامنے آئی کہ یہ زمین شمشان کے لئے ہے تو مسئلہ پیدا ہونے لگی. ‘انہوں نے بتایا کہ’ یہ مسئلہ حل ہو گیا اور چھ میں سے ایک بیگھہ زمین شمشان کے لئے دے دی گئی ہے. ‘