یو پی میں اچانک چمکائے جانے لگیں مایاوتی حکومت میں بنی یادگاریں اور ہاتھی

0
12
1 of 3

لکھنؤ: بدلتی سیاسی ہوا کو بھانپ کر اس کی ندی میں بہہ جانے والے کچھ انتظامی حکام نے اپنی چال بدلنی شروع کر دی ہے. دارالحکومت میں بیٹھے کچھ اعلی افسران اب جتنا وقت وزیر اعلی اکھلیش کے دربار میں گزار رہے ہیں اتنا ہی وقت بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) کے ساتھ بھی گزار رہے ہیں. یہ کام اس وقت شروع کیا گیا ہے جب ریاست میں دو مراحل کے انتخابات کی پولنگ ہونا باقی ہے. ایسے میں اس بات کی كياسباجي شروع ہو گئی کہ کیا افسروں کو بی ایس پی کے اقتدار میں آنے کی آہٹ مل رہی ہے؟

mayawati

انتظامی اعلی افسران جو اب تک بی ایس پی کو نظرانداز طور پر دیکھ رہے تھے لیکن انہیں یہ لگنے لگا ہے کہ یوپی میں مایاوتی کی حکومت آ سکتی ہے وہ اپنی گوٹیاں بچھانے میں مصروف ہو گئے ہیں.

Read More>>>

1 of 3