سپریم کورٹ: سمجھوتے کی گنجائش نہیں، تو چھ ماہ پہلے ہی مل سکتی ہے طلاق

0
75

نئی دہلی: اب طلاق کا انتظار کر رہے جوڑے چھ ماہ پہلے بھی اس پابندی سے آزاد ہو سکتے ہیں. سپریم کورٹ نے طلاق کے ایک کیس کی سماعت کے دوران یہ فیصلہ سنایا کہ ‘شادی کے بندھن سےجو جوڑے باہمی رضامندی سے الگ ہونا چاہتے ہیں، انہیں ہندو میرج ایکٹ کے تحت’ کولنگ آف پیریڈ ‘کے چھ ماہ کی فراہمی میں چھوٹ دینا چاہئے . ‘

یاد رہےسپریم کورٹ کا یہ فیصلہ دہلی کے ایک جوڑے کے طلاق کے معاملے میں آیا ہے. اس نے مزید کہا گزشتہ 8 سال سے مختلف رہ رہا تھا اور باہمی رضامندی سے تیس ہزاری کورٹ میں طلاق کے لئے درخواست دی تھی.

اگر جج چاہیں تو …
سپریم کورٹ کے جسٹس آدرش کمار گوئل اور يويو للت کی بنچ نے اس بارے میں کہا کہ ‘آخری حکم کے لئے 6 ماہ کا وقت لینا سول جج پر انحصار کرنا ہوگا. اگر جج چاہیں تو فوری طور پر طلاق کا حکم دے سکتے ہیں.

١٩٧٦ میں شامل کر دیا گیا تھا ‘کولنگ آف پیریڈ’
غور طلب ہے، کہ ہندو میرج ایکٹ میں 1976 میں ہوئے ترمیم کے تحت باہمی رضامندی سے طلاق کے معاملے میں چھ ماہ کے ‘کولنگ آف پیریڈ’ شامل کر دیا گیا تھا. سپریم کورٹ کے مطابق، چھ ماہ کی مدت سےپھگارڈ کے طور پر مقرر کیا گیا تھا. تاکہ جلدی میں ایسا-ویسا کوئی فیصلہ نہ ہو جائے، لیکن جب باہمی رضامندی سے ہی ٹوٹنا ہو رہا ہے تو ایک سال بھی کافی ہوتا ہے.