سیف اللہ نے رچی تھی بڑی سازش، 27 مارچ کو بارہ بنکی دہلانے کی کر رہا تھا سازش

| Updated at March 15th, 2017 at 5:50 pm,
0
14

لکھنؤ: اترپردیش کےدارالحکومت لکھنؤ میں تقریبا ً11 گھنٹے تک چلی مڈبھیڑ کے بعد ریاستی پولیس کے انسداد دہشت گردی دستے (اے ٹی ایس) نے بین الاقوامی دہشت گرد تنظیم آئی ایس آئی ایس کے مشتبہ دہشت گرد سیف اللہ کو مار گرایا۔ اے ٹی ایس نے وقت رہتے ایس آئی ایس کے یوپی کو دہلانے کی سازش کو بھی ناکام کر دیا.

مدھیہ پردیش کے بھوپال-اجین مسافر ٹرین میں منگل (7 مارچ) کو ہوئے دھماکے کے تار سیکورٹی ایجنسیوں یہاں سے منسلک ملے تھے. اس کے بعد تو جیسے دہشت گرد منصوبوں کی پرت کی طرف سے پرت حقیقت کھلتی ہی چلی گئی.

بارہ بنکی میں تھی دہلانے کوشش کریں

دئینک جاگرن کی خبر کے مطابق ایس آئی ایس سے منسلک اس ماڈيول آئندہ 27 مارچ کو بارہ بنکی ضلع کے ایک قصبے میں بھیڑ بھاڑ والی جگہ پر دھماکے کرنے کی منصوبہ بندی کر رہا تھا. اس سازش میں سیف اللہ کے علاوہ کانپور كے اے ڈي اے کالونی رہائشی دانش اختر عرف ظفر، علی گڑھ کے اندرانگر رہائشی سید میر حسین عرف همزہ اور کانپور کے جاجمئو رہائشی آتش مظفر کے علاوہ کچھ دیگر اراکین بھی شامل تھے. سیف اللہ اور ایک ساتھی کو چھوڑ یہی تینوں مدھیہ پردیش دھماکے کیس میں ملوث تھے. دھماکے کے بعد مدھیہ پردیش پولیس نے تینوں کو پپريا سے گرفتار کیا تھا.

شام سے رابطے میں تھا

یوپی کے اے ڈی جی (لاء اینڈ آرڈر) دلجیت چودھری نے بتایا کہ ‘مدھیہ پردیش اور اترپردیش میں خراسان ماڈيول کے چھ ارکان کو گرفتار کیا گیا ہے. خراسان شام کی ایک جگہ ہے جہاں سے ان نوجوانوں کے رابطہ بنے ہیں. ‘

بھوپال-اجین ٹرین دھماکے تو بس آغاز

واقعہ کے آغاز منگل کو مدھیہ پردیش میں بھوپال-اجین مسافر ٹرین میں دھماکے سے ہوئی. دھماکے کی سازش کانپور کے جاجمو علاقے کے سےپھللاه نے رچی. اس کے لئے لکھنؤ کے کاکوری تھانہ علاقے کے حاجی کالونی میں کرایہ کا مکان لے کر تیاری کی گئی.

گروہ کے ارکان کی تصاویر ملی

کانپور میں پکڑے گئے ملزمان کے پاس سے ملے لیپ ٹاپ میں اے ٹی ایس کو ایس آئی ایس کے اشتعال انگیز ادب اور بم بنانے کی ترکیب والی ویڈیو فوٹیج ملا ہے. اس گروہ کے کئی ارکان کے فوٹو گراف بھی ملے ہیں.